Monday, Nov 11th

Last update12:39:09 AM GMT

تیرہویں تنخواہ ہر ملازم کا حق ہے

دسمبر کے مہینے میں ماہانہ تنخواہ کے علاوہ ایک تیرھویں تنخواہ دی جاتی ہے ۔ یہ تنخواہ ہر ملازم حاصل کرتا ہے ۔ اسے tredicesima mensilitàکہتے ہیں ۔ دسمبر کا مہینہ ملازموں کے لیے خوشی کا مہینہ ہوتا ہے کیونکہ اس مہینے میں معمول کی تنخواہ کے علاوہ ایک اور مزید تنخواہ دی جاتی ہے ۔ تیرھویں تنخواہ دوسری تنخواہوں کی طرح ہوتی ہے اور یہ صرف ملازمین یا ورکروں کو دی جاتی ہے ، یعنی بزنس کرنے والے یہ تنخواہ حاصل نہیں کر سکتے ۔ تیرھویں تنخواہ کا حق 1937 میں صرف انڈسٹری میں کام کرنے والے ملازمین یا ورکروں کو دیا گیا تھا ۔ اسکے بعد 1946 میں اسے عام ملازمین پر بھی اسکا حق جاری کر دیا گیا تھا ۔ 1960 میں صدر کے ایک قانون کے مطابق تیرھویں تنخواہ کو ضروری قرار دے دیا گیا تھا ۔ اس قانون کا نمبر 1070 ہے ۔ تیرھویں تنخواہ کا حق ہمیشہ کے کنٹریکٹ والے ملازمین کے علاوہ مقررہ مدت کے کنٹریکٹ والوں کے لیے بھی مختص کیا گیا ہے ۔ تیرھویں تنخواہ سال کے ہر مہینے میں جمع ہوتی رہتی ہے ، یعنی یکم جنوری سے لیکر 31 دسمبر تک کے عرصے میں ایک تیرھویں تنخواہ مکمل ہوجاتی ہے ۔ تیرھویں تنخواہ سال میں ایک بار دی جاتی ہے اور اسکا مقصد کرسمس کا تہوار ہے ۔ کرسمس کے تہواروں کے دوران ملازم کے پاس کچھ رقم زیادہ ہونے کیوجہ سے اسکی خوشیاں مزید سوہانی ہوجاتی ہیں ۔ تیرھویں تنخواہ کا حساب سال کے دوران کام کرنے سے مختص کیا جاتا ہے ۔ عام کنٹریکٹ کے مطابق بنیادی تنخواہ کی بنا پر تیرھویں تنخواہ کی رقم کا حساب لگایا جاتا ہے ۔ تیرھویں تنخواہ کا حساب لگانے کے لیے آپ کو اپنا آخری بوستا پاگا یا پے سلپ دیکھنی ہوگی ۔ آخری بوستا پاگا کی بنیادی تنخواہ کے مطابق تیرھویں تنخواہ نکلے گی ۔ اگر ملازم نے پورا سال کام کیا ہے تو اسے تیرھویں تنخواہ مکمل طور پر دی جائے گی اور اگر ملازم نے سال کے دوران کسی مہینے میں کام شروع کیا ہے تو اسکی تیرھویں تنخواہ اسی مہینے سے شروع کی جائے گی ۔ یعنی اگر ملازم نے مارچ کے مہینے میں کام شروع کیا ہے تو دسمبر میں اسے مارچ کے مہینے سے لیکر دسمبر کے مہینے تک یعنی 10 مہینوں کی تیرھویں تنخواہ جاری کی جائے گی ۔ مہینے کا تعین 15 دن گزر جانے کے بعد کیا جاتا ہے ۔ اگر ملازم نے 16 مارچ کو کام شروع کیا تھا تو اس صورت میں مارچ کا مہینہ بھی شمار کیا جائے گا 15 کم ہونے کی صورت میں اس مہینے کو شمار نہیں کیا جائے گا ۔ پارٹ ٹائم کنٹریکٹ والے تیرھویں تنخواہ فل ٹائم والوں کی نسبت  آدھی حاصل کریں گے ۔ اگر ایک پارٹ ٹائم والا ہفتے میں 20 گھنٹے کام کرتا ہے تو اسے 20 گھنٹوں کے حساب سے تیرھویں تنخواہ دی جائے گی ۔ فل ٹائم یا 40 گھنٹے کام کرنے والے ملازم کو اسکے گھنٹوں کے حساب سے پوری تیرھویں تنخواہ دی جائے گی ۔ اگر ملازم سال کے دوران اپنا کنٹریکٹ تبدیل کروا لیتا ہے ، یعنی پارٹ ٹائم سے فل ٹائم کروا لیتا ہے یا پھر فل ٹائم سے پارٹ ٹائم کروا لیتا ہے تو اسکی تیرھویں تنخواہ کا حساب اسکے گھنٹوں اور مختلف مدت میں  کام کرنے  سے نکال لیا جائے گا ۔ تیرھویں تنخواہ کا حساب سال میں کام کرنے کے حوالے سے نکالا جاتا ہے ، اگر ملازم کام نہ کرے تو اسکا حق تیرھویں تنخواہ پر نہیں ہوتا لیکن بعض مواقعوں کے مطابق کام نہ کرنے پر بھی ملازم تیرھویں تنخواہ حاصل کر سکتا ہے ۔ اگر ملازم مختلف وجوہات کی بنا پر کام پر نہیں گیا تو اس صورت میں بھی اسکا حق تیرھویں تنخواہ پر ہوتا ہے ۔ شادی کے لیے 15 کی چھٹیاں حاصل کرنے پر تیرھویں تنخواہ کا حق برقرار رہتا ہے ۔ کام پر چوٹ لگنے کی صورت میں اور بیمار ہونے کی صورت میں تیرھویں تنخواہ کا حق برقرار رہتا ہے ۔ عام چھٹیوں کے دوران اور کام سے گھنٹوں کی صورت میں اجازت حاصل کرنے کے دوران تیرھویں تنخواہ کا حق برقرار رہتا ہے ۔ عورت ملازم حاملہ ہونے کے دوران بچہ پیدا ہونے سے قبل 2 مہینے اور بچہ پیدا ہونے کے بعد3 ماہ تک کام سے غیر حاضر رہ سکتی ہے ۔ اسکے علاوہ بچے کو دودہ پلانے اور دوسرے مسائل کے لیے دنوں کی چھٹیاں حاصل کرسکتی ہے ۔ اس تمام عرصے میں کام سے غیر حاضر ہونے کے باوجود تیرھویں تنخواہ کا حق برقرار رہتا ہے ۔ اگر ملازم بیماری اور کام پر چوٹ لگنے کی صورت میں کنٹریکٹ کے مطابق زیادہ مدت تک کام پر نہیں گیا تو اس صورت میں تیرھویں تنخواہ کا حق برقرار نہیں رہتا ۔ قومی کنٹریکٹ میں بیماری اور کام پر چوٹ لگنے کی مدت کا عرصہ تہہ پایا گیا ہے ۔ اگر ملازم اس مدت سے زیادہ گھر پر رہے تو اسکا تیرھویں تنخواہ کا حق ختم ہوجاتا ہے ۔ بعض اوقات ملازمین اپنی چھٹی کے علاوہ بغیر تنخواہ کی چھٹی یا پرمیشن حاصل کرتے ہیں ، اس صورت میں اس غیر حاضری کے عرصے کو تیرھویں تنخواہ میں شامل نہیں کیا جائے گا ۔ ہڑتال کرنا ، حاملہ ہونے کی صورت میں اپنے حق کی چھٹیوں کے علاوہ چھٹیاں کرنا، ملٹری سروس کے لیے چھٹیاں حاصل کرنا ، ان تمام صورتوں میں تیرھویں تنخواہ کا حق غیر حاضری والی مدت میں نہیں دیا جاتا ۔ تیرھویں تنخواہ حاصل کرنے کی صورت میں بھی ٹیکس دیے جاتے ہیں ۔ تیرھویں تنخواہ کے ٹیکس اسکے بوستا پاگا سے حاصل کیے جاتے ہیں، انکا تعلق دسبمر کی تنخواہ سے ہرگز نہیں ہوتا ۔ پنشن شدہ افراد بھی تیرھویں تنخواہ حاصل کرتے ہیں ۔ اگر ایک ضعیف بندہ یا عورت سال کے کسی حصے میں مر جاتا ہے تو اس صورت میں مرنے والے کے لواحقین اسکی تیرھویں تنخواہ حاصل کرسکتے ہیں ۔ کولف ملازمین بھی دوسرے ملازمین کی طرح تیرھویں تنخواہ حاصل کرتے ہیں ۔ اگر کولف ملازمین کسی کام کے مالک کے پاس چند گھنٹے کام کرتے ہیں اور یا پھر کسی مالک کے پاس پورا دن کام کرتے ہیں ، دونوں صورتوں میں تیرھویں تنخواہ کا حق برقرار رہتا ہے ۔ کولف کو تیرھویں تنخواہ دینے کے لیے بہت آسان طریقہ ہے ، یعنی اسکی دسمبر کی تنخواہ کے مطابق اسے تیرھویں تنخواہ دی جائے گی ۔ اگر کولف ملازم گھنٹوں کے حساب سے کسی مالک کے پاس کام کرتا ہے تو اس صورت میں اسکے گھنٹے جمع کر لیے جائيں گے اور انکا حساب 52 ہفتوں کے حساب سے نکال لیا جائے گا ۔ 52 ہفتوں کو مہینوں میں تقسیم کرتے ہوئے ہر مہینے کا تیرھویں تنخواہ کا حساب نکل آئے گا ۔ کولف ملازمین بھی سال کے دوران کام کرنے کی صورت میں تیرھویں تنخواہ حاصل کریں گے ۔ اگر کولف ملازم مختلف مالکان کے پاس کام کرتا ہے تو اس صورت میں تمام مالکان اسکے گھنٹوں کے حساب سے اسے تیرھویں تنخواہ حاری کریں گے ۔ اگر کولف ملازم ایک مہینے میں چند گھنٹے کام کرتا ہے تو دوسرے مہینے میں پچھلے مہینے کی نسبت زیادہ یا کم گھنٹے کام کرتا ہے تو اس صورت میں اسکے مہینوں میں کام کرنے کی صورت پر تیرھویں تنخواہ کی رقم مقرر کی جائے گی ۔

Joomla Templates and Joomla Extensions by ZooTemplate.Com