Friday, Aug 14th

Last update06:26:21 PM GMT

یونانی اور امیگرنٹس کے بچوں کی کلاسیں علیحدہ کی جائیں ، آلبا دوراتا

روم، 16 مارچ 2013 ۔۔۔۔ یونان یا گریس کی فاشسٹ پارٹی کے قومی اسمبلی کے  ممبر  Matthaiopouloنے ایک تچویز پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ ملک کے سکولوں میں غیر ملکی اور یونانی بچوں کی کلاسیں علیحدہ کی جائیں۔ یاد رہے کہ چند ماہ قبل اسی پارٹی کے کارکنوں نے ہمارے ایک جوان پاکستانی کو ہلاک کردیا تھا ۔ یہ پارٹی غیر ملکیوں کے خلاف ہے اور یونان کے بحران کا رشتہ غیر ملکیوں سے جوڑتی ہے ۔ عام طور پر جب بھی کسی ملک پر آفت آتی ہے تو اس آفت کا دشمن عام طور پر باہر والا تصور کیا جاتا ہے ۔ کسی دوسرے کو قصور وار ٹھہرانے والا تصور آسان اور جاہلوں کو قائل کرنے کے لیے بہترین آلا سمجھا جاتا ہے ۔ کئی بار جب اٹلی میں بھی امیگریشن کھولی جاتی ہے تو چند پرانے غیر ملکی اس امیگریشن کو پسند نہیں کرتے کیونکہ انہیں ڈر ہوتا ہے کہ یہ ہمارے دائرے کار پر حملہ آور ہونگے ۔ خیر آلبا دوراتا کے اس فیصلے پر یونان کی تمام سیاسی جماعتوں نے احتجاج کیا ہے اور چند ممبران قومی اسمبلی سے واک آؤٹ کرگئے ہیں ۔ بائیں بازو کی سیاسی جماعت نے کہا ہے کہ یہ جمہوری ملک ہے اور جمہوریت کے چند اصول ہوتے ہیں ۔ آلبا دوراتا جنگل کا قانون نافذ نہیں کرسکتی ۔

Joomla Templates and Joomla Extensions by ZooTemplate.Com

آخری تازہ کاری بوقت ہفتہ, 16 مارچ 2013 10:55