Saturday, Mar 25th

Last update08:57:59 PM GMT

دہشت گرد گروہ نے ترجمان کو بھی دھمکی دی تھی

روم۔ 26 اپریل 2015 ۔۔۔۔ اٹالین اخبارات کے مطابق گزشتہ دو دنوں میں پاکستانی دہشت گرد گروہ کے 10 افراد گرفتار ہو چکے ہیں اور باقیوں کی تلاش جاری ہے ۔ نئے انکشافات کے مطابق اٹالین پولیس نے بتایا کہ انہوں نے انٹرپول کے زریعے پاکستانی پولیس کو بھی گروہ کے مشن کے بارے اطلاع فراہم کردی تھی لیکن پولیس کے ایک اعلی افسر  نے 20 سے 25 لاکھ رشوت حاصل کرتے ہوئے گروہ کے سرغنہ سلطان ولی خان کو تفتیش کے بارے میں بتا دیا تھا اور یہ بھی کہا تھا کہ اٹالین پولیس تم لوگوں کا پیچھا کر رہی ہے ۔ حتی کہ پاکستانی پولیس کے ایک دوسرے افسر نے انٹرپول کی ای میل گروہ کے حوالے کردی تھی۔ 8 جنوری 2009 کے دن سلطان خان نے فون پر بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ فلاں پٹھان سے خبردار رہنا کیونکہ وہ پولیس کا مخبر اور ترجمان ہے اور حرامی انسان ہے ۔ پولیس کے مطابق سلطان خان نے ترجمان کو قتل کرنے کے لیے ایک شخص کی مدد بھی حاصل کی تھی ۔ اٹالین پولیس کے مطابق سلطان خان اپنے زون کا با اثر شخص ہے اور پولیس والے بھی اسکے ساتھ تعاون کرتے ہیں ۔ ایک فون ٹیپ کے دوران سلطان خان نے اپنے علاقے کے دشمن گروپ کے لواحقین اور بچوں تک کو قتل کرنے کے لیے کہا تھا اور اٹالین پولیس نے پاکستانی پولیس کو باور کردیا تھا کہ وہ بڑی خون ریزی کا پروگرام بنا رہا ہے لیکن پاکستانی پولیس نے فوری طور پر سلطان خان کو باخبر کردیا تھا ۔ اسکے علاوہ آج کی اخبار مسیجیرو میں یہ بھی لکھا ہے کہ بیرگامو کا امام حافظ ذوالفقار جو کہ تصویر میں موجود ہے اپنے آپ کو اسامہ بن لادن کا بھائی کہہ کر پکارتا تھا ۔

Joomla Templates and Joomla Extensions by ZooTemplate.Com