Thursday, Apr 25th

Last update12:39:09 AM GMT

RSS

لیگل گائیڈ

ایک فرد کا مستعفی' ہونا

کسی ایک فرد کو صرف اس وقت کام سے نکالا جا سکتا ہے یا مستعفی کیا جا سکتا ہے ، جب تمام جواز موجود ہوں ۔ ورکر کو کام سے اس وقت مستعفی کیا جا سکتا ہے ، جب مالک کے پاس صحیح جواز یا giusta causaیا  giustificato motivo  موجود ہو ۔ اگر ورکر نے کوئی ایسی بڑی غلطی کی ہے ، یا پھر ایسا رویہ اختیار کیا ہے ، جس کے تحت اسے کام سے نکالا جا سکے تو اس صورت میں مستعفی کرنا قانونی قرار دیا جاتا ہے ۔

 

 

صحیح جواز یا giusta causa

صحیح جواز اس صورت میں اپلائی کیا جاتا ہے ، جب ورکر اپنا کام یا اپنی ذمہداری صحیح طریقے سے نہ ادا کر رہا ہو ۔ اس کے لیے کسی عرصے کا تعین نہیں کیا جاتا یعنی یہ کم عرصے پر بھی مبنی ہو سکتا ہے ۔ صحیح جواز کے تحت کام سے اس وقت نکالا جاتا ہے ، جب ورکر اور کام کے مالک کے درمیان اعتماد ختم ہو جائے ۔ مثال کے طور پر اگر ورکر بغیر اطلاع کے چھٹیاں کرنی شروع کر دے تو اس صورت میں صحیح جواز کے زریعے اسے مستعفی کیا جا سکتا ہے ۔ اگر ملازم کام پر جھوٹ بولے ، مالک کو ڈرائے دھمکائے یا پھر دوسرے ملازمین کے ساتھ لڑائی کرے تو اس صورت میں بھی صحیح جواز کے زریعے اسے مستعفی کیا جا سکتا ہے۔ اگر ملازم کام پر چوری کرے یا کوئی جرم کرے ، اگر ملازم کام کے علاوہ باہر اپنی پرائیویٹ زندگی میں جرائم کرے تو اس صورت میں بھی ورکر اور کام کے مالک کے درمیان اعتماد ختم ہو جاتا ہے اور استعفی' کے جواز پیدا ہو جاتے ہیں ۔ یاد رہے کہ صحیح جواز کی صورت میں مالک کسی اطلاع کے بغیر ملازم کو کام سے نکال سکتا ہے ۔ یعنی اس صورت میں ملازم کو معینہ مدت کا وقت مہیا نہیں کیا جاتا ۔

 

اچھا جواز یا giustificato motivo

اچھا جواز یا giustificato motivoکے تحت اس وقت ملازم کو کام سے نکالا جاتا ہے ، جب وہ اپنے کنٹریکٹ کے لوازمات پورے نہ کرے ۔ اچھے جواز دو قسم کا ہوتا ہے ۔ ایک وہ جس میں ملازم اپنے حقوق و فرائض پورے نہیں کرتا ۔ اس صورت میں ملازم کو کام سے نکالا جا سکتا ہے لیکن کام کے مالک کو اس صورت میں ملازم کو مستعفی' کرنے کی مدت فراہم کرنی ہوتی ہے ۔ یعنی اس صورت میں فوری طور پر اسی دن ملازم کو کام سے نہیں نکالا جا سکتا ۔ یہ استعفی' اس صورت میں دیا جاتا ہے ، جب ملازم کام صحیح نہ کر رہا ہو اور کام کی جگہ پر مشکلات کھڑی کر رہا ہو یا پھر وہ کام کی جگہ پر اعتماد، قوانین کی پیروی یا دوسروں کی عزت نہ کر رہا ہو ۔ ہر ملازم پر فرض ہوتا ہے کہ وہ کام کے دوران کنٹریکٹ کے قوانین کو پورا کرے ۔

دوسری قسم کے اچھے جواز میں ملازم کو کام سے اس وقت نکالا جاتا ہے، جب کام کی جگہ پر کسی وجہ سے مالک اس ڈیپارٹمنٹ کو یا پھر اسکی مشین کو بند کرنے کا فیصلہ کر لے ۔ یعنی اگر اس ملازم کی جگہ والے سیکٹر میں بحران آجائے ، یا پھر اس کام پر پروڈکشن کم ہو جائے تو  اس صورت میں ملازم کو کام سے نکالا جا سکتا ہے لیکن کام کے مالک کو اس صورت میں ملازم کو مستعفی' کرنے کی مدت فراہم کرنی ہوتی ہے۔ اگر مالک مدت کا وقت فراہم نہ کرے تو وہ اس صورت میں مدت کی رقم ملازم کو ادا کرے گا ۔

بعض ایسے حالات و اقعات بھی ہوتے ہیں ، جن میں کام کا مالک ملازم کو صحیح جواز یا اچھا جواز پیش کرنے کے بغیر بھی ملازم کو کام سے نکال سکتا ہے ۔ اس قسم کے استعفی' کو ad nutumکہتے ہیں ۔ یہ قانون گھر میں کام کرنے والے ڈومیسٹک ملازمین پر لاگو کیا جا سکتا ہے ۔ وہ ملازمین جن کی عمر 65 سال زیادہ ہوگئی ہے اور انہیں پنشن مل سکتی ہے یعنی انکی عمر پنشن لینے کے قابل ہوگئی ہے ۔ پروفیشنل اتھلیٹس یا کھلاڑی، وہ ملازم جنہیں ٹرائی مدت کے لیے کام پر رکھا گیا ہے ۔ اس قسم کے استعفی' میں ملازم کو مستعفی' کرنے کی مدت فراہم کرنی لازمی ہوتی ہے ۔ اگر مالک مدت کا وقت فراہم نہ کرے تو وہ اس صورت میں مدت کی رقم ملازم کو ادا کرے گا ۔ یہ رقم اس رقم کے برابر ہوگی جو کہ ملازم نے کام کرنے سے حاصل کرنی تھی ۔

 

 

جب کام کا مالک کسی ملازم کو مستعفی' کرتا ہے تو اس پر لازمی ہوتا ہے کہ وہ تمام ان قوانین پر عمل کرے ، جو کہ استعفی' کے لیے لازمی ہوتے ہیں ۔ ان لازمی لوازمات میں یہ بھی شامل ہے کہ کام کا مالک ملازم کو اس استعفی' کے خلاف کاروائی کرنے کا حق ادا کرے ۔ اس صورت میں مالک کو استعفی' لکھ کر دینا ہوتا ہے ۔

 

کام کے مالک پر لازمی ہوتا ہے کہ وہ ملازم یا ورکر کو لکھ کر مستعفی' کرے ۔ الفاظ یا منہ سے بولے فقروں سے استعفی' کی کوئی قانونی قدر نہیں ہوتی ۔ اگر کوئی مالک ملازم کو منہ بولے الفاظ سے مستعفی' کرے تو اس صورت میں ملازم پر لازمی ہوتا ہے کہ وہ کام پر واپس آئے اور اپنا کام جاری رکھے ۔ اگر ملازم منہ بولے استعفی' سے کام پر نہیں آئے گا تو مالک کے پاس صحیح جواز کے زریعے ثبوت بن جائیں گے اور وہ اسے کام سے نکال دے گا ۔ کام سے نکالنے کی وجہ فوری طور پر مالک بیان نہیں کرتا  لیکن اگر ملازم اس وجہ کے بارے میں پوچھنا چاہے تو مالک پر لازمی ہوتا ہے کہ وہ لکھ کر ان وجوہات کے بارے میں بیان کرے ۔ 

 

کام کے مالک پر لازمی ہوتا ہے کہ وہ ملازم کو مستعفی' کرتے وقت کام کے کنٹریکٹ کا خیال رکھے ۔ مستعفی' کی مدت اس وقت شروع ہوتی ہے ، جب کام کا مالک ملازم کو لکھ کر استعفی' پیش کردیتا ہے ۔ اس مدت کے دوران چھٹیاں شامل نہیں کی جا سکتیں ۔ اگر مالک مدت کا وقت فراہم نہ کرے تو وہ اس صورت میں مدت کی رقم ملازم کو ادا کرے گا ۔ یہ رقم اس رقم کے برابر ہوگی جو کہ ملازم نے کام کرنے سے حاصل کرنی تھی ۔ یاد رہے کہ کام سے نکالنے کی مدت صرف صحیح جواز کے استعفی' کے لیے استعمال نہیں کی جاتی ۔

 

 

استعفی' کے خلاف کاروائی کرنا

جب کسی ملازم کو غیر قانونی طریقے سے مستعفی' کر دیا جائے تو اس صورت میں استعفی' کے بعد یا استعفی' کی اطلاع کے بعد ملازم کے پاس 60 دن ہوتے ہیں ، وہ ان دنوں میں زبردستی استعفی' کے خلاف کاروائی کر سکتا ہے ۔ اسے یہ کاروائی کسی کاغذ پر لکھ کر کرنی ہوتی ہے ۔ ملازم کے لیے یہ بہتر ہوتا ہے کہ وہ مالک کا استعفی' اپنے گھر کے ایڈریس پر حاصل کرے اور یہ استعفی' یاد رہے ڈاک کی رجسٹری کے زریعے واپسی کی رسید سے حاصل ہوتا ہے ۔ اس طریقے سے کاروائی کرنے کی تاریخ اس دن سے شروع ہوتی ہے ، جب ملازم اس رجسٹری کو حاصل کرتا ہے ۔ ملازم اس رجسٹری کو حاصل کرتے ہوئے کام کے مالک سے بات چیت کرتے ہوئے مسئلے کے حل کے لیے کوشش کرتا ہے ۔ اس کوشش کے لیے ملازم کے پاس 270 دن ہوتے ہیں ۔ اگر ملازم اور مالک کے درمیان مسئلے کا حل نہ نکل سکے تو اس صورت میں ملازم کام کی عدالت میں کیس کرتا ہے ۔ کیس جمع کروانے کے لیے ملازم کے پاس 60 دنوں کی مدت ہوتی ہے ۔ اگر ملازم کو غیر قانونی طریقے سے مستعفی' کیا گیا ہے تو اس صورت میں بہتر ہوتا ہے کہ آپ کیس کرنے کے لیے کسی ایسے وکیل سے رابطہ کریں جو کہ کام یا روزگار کے قوانین کا ایکسپرٹ ہوتا ہے ۔

 

غیر قانونی استعفی' کا جرمانہ

غیر قانونی استعفی' کا جرمانہ مختلف صورتوں میں مختلف ہوتا ہے ۔ یعنی اگر کام کے ملازم کے پاس 15 سے زیادہ ملازم ہیں ، یا پھر 15 ملازم ہیں ۔ اگر مالک کے پاس 15 سے زیادہ ملازم ہیں تو اس صورت میں اگر ملازم کیس جیت جائے تو مالک پر لازمی ہوتا ہے کہ وہ Tutela realeکے تحت اسے دوبارہ کام پر واپس بلا لے اور اسے وہ تمام اخراجات فراہم کرد ےجو کہ اس نے کیس کے دوران کیے ہیں ۔ قانون کے مطابق اگر ملازم اس نوکری کی جگہ پر واپس نہ آنا چاہے تو وہ اس صورت میں 15 مہینوں کی تنخواہ مالک سے حاصل کرتے ہوئے کام کا رشتہ ختم کر سکتا ہے ۔ وہ نجی ادارے جہاں 15 سے کم ملازم ہوتے ہیں ، انہیں جرمانہ کم کیا جاتا ہے  اور یہاں مختلف قوانین لاگو کیے جاتے ہیں ۔ اس صورت میں tutele obbligatoriaکا قانون لاگو ہوتا ہے ۔ اگر ملازم کیس جیت جائے تو مالک پر لازمی ہوتا ہے کہ وہ یا تو 3 دنوں کے اندر ملازم کو کام پر رکھ لے یا پھر ایک جرمانہ ادا کردے جسے indennitàکہتے ہیں ۔ کام کے مالک پر منحصر ہوتا ہے کہ وہ جرمانہ یا ملازم کی دوبارہ بھرتی پر نظر ثانی کر سکے ۔

 

 

 

 

شادی اور حاملہ ہونے کی صورت میں استعفی' غیر قانونی

اگر ملازم کوئی عورت ہے تو اسے اسکی شادی اور حاملہ ہونے کی صورت میں مستعفی' کرنا غیر قانونی قرار دیا گیا ہے ۔ اٹلی کے قانون اور آئین کے مطابق خاندان کی سالمیت اور اسکے اتحاد ایک قانونی حق ہے ۔  اگر ایک باپ نے بچے کی پرورش کے لیے کام سے چھٹی حاصل کر رکھی ہے ( جو کہ بجے کی عمر ایک سال ہونے تک لی جا سکتی ہے ) اس صورت میں بچے کے لیے لی گئی چھٹیوں کے دوران باپ کو مستعفی' نہیں کیا جاسکتا ۔ اس کے علاوہ وہ عورتیں جو کہ کام کے دوران حاملہ ہوجاتی ہیں اور چھٹی حاصل کر لیتی ہیں ، انہیں بھی مستعفی' نہیں کیا جاسکتا۔  یاد رہے کہ ان عورتوں کو بچے کی پیدائش، دودہ پینے کی عمر کے بعد بچے کی ایک سال کی عمر تک مستعفی' نہیں کیا جاسکتا۔ اگر انہیں مستعفی' کر دیا جائے تو یہ 90 دنوں کے اندر تمام سرٹیفیکٹ مہیا کرتے ہوئے کیس جیت سکتی ہیں ۔ یاد رہے کہ اس صورت میں مستعفی' کرنا غیر قانونی ہے ۔

 

بیماری پر مستعفی' کرنا

یاد رہے کہ کسی ملازم کو بیماری کی چھٹیوں کیوجہ سے مستعفی' نہیں کیا جا سکتا ۔ اگر ملازم بیمار ہے تو اس پر لازمی ہوتا ہے کہ وہ میڈیکل سرٹیفکٹ مالک کو روانہ کردے اور اپنے کام کی جگہ قائم رکھے ۔ چند ایسے معاملات ہیں ، جن صورتوں میں بیماری کیوجہ سے ملازم کو کام سے نکالا جا سکتا ہے ۔ جب ملازم اپنی بیماری کیوجہ سے کام نہ کرسکے یا پھر بیماری کے دوران اس وقت گھر نہ ہو جب ڈاکٹر اسے چیک کرنے کے لیے آئے ۔ اس صورت میں ڈاکٹر کو گھر پر نہ ہونے کیوجہ بتائی جانی ضروری ہوتی ہے ، اگر نہ بتائی جائے تو ملازم کو کام سے نہیں نکالا جا سکتا لیکن ملازم کو خبردار ہونے کا ایک خط دیا جا سکتا ہے ۔ ہر ملازمت کے کنٹریکٹ میں سال میں بیماری کی مدت کا زکر ہوتا ہے جو کہ قومی کنٹریکٹ کے مطابق ہوتی ہے ۔ اگر ملازم اس مدت کے بعد بیماری جاری رکھے تو اسے کام سے نکالا جا سکتا ہے ۔

غیر ملکی مستعفی' ہونے سے کیسے کاروائی کرسکتے ہیں

غیر ملکی غیر قانونی طور پر  مستعفی' ہونے کی صورت میں وہی حقوق رکھتے ہیں جو کہ اٹالین ورکر کے پاس ہیں ۔ وہ غیر ملکی جو کہ یورپین یونین سے تعلق رکھتے ہیں ، ان کے لازمی ہوتا ہے کہ یہ غیر ملکی استعفی' کی صورت میں کوئی دوسرا کام تلاش کریں ۔ یاد رہے کہ ان کے لیے لازمی ہوتا ہے کہ یہ اٹلی میں رہنے کے لیے کام کرتے ہوئے سالانہ بچت ظاہر کریں ۔ وہ غیر ملکی جو کہ غیر یورپین ہیں اور عام پر پر میسو دی سوجورنو کے ساتھ کام کرتے ہیں ۔ اگر انہیں قانونی طور پر کام سے نکال دیا جائے یا پھر یا استعفی' دیدیں تو ان کے لیے لازمی ہوتا ہے کہ یہ 40 دنوں کے اندر روزگار کے دفتر میں جا کر اپنا اندراج کروادیں اور انہیں یہ بتا دیں کہ وہ کام تلاش کر رہے ہیں ۔ مالک پر لازمی ہوتا ہے کہ وہ مستعفی' کرنے کی صورت میں 5 دنوں کے اندر روزگار کے دفتر یا centro per l’impiegoمیں اطلاع کردے ۔ اگر آپ ڈومیسٹک ملازمین کومستعفی' کرنا چاہتے ہیں تو اس صورت میں اپکو انپس کے دفتر میں رپورٹ کرنی ہوگی اور انکی انٹرنیٹ کی سائٹ www.inps.itسے استعفی' کے فارم ڈاؤن لوڈ کرنے ہونگے ۔

یاد رہے کہ اگر غیر یورپین غیر ملکی مستعفی' ہو جائے تو اسکی سوجورنو اپنی مدت تک جاری رہتی ہے لیکن اسے روزگار کے دفتر میں اندراج کروانا ہوتا ہے ۔ اس کے بعد روزگار کے دفتر والے اس کا اندراج ایک رجسٹر میں کر دیں گے ۔ یہ اندراج غیر ملکی سوجورنو کی مدت تک اور کم سے کم 6 مہینے تک ویلڈ رہے گا ۔ اگر اس صورت میں بھی غیر ملکی کام تلاش نہ کر سکے تو اس کا حق ہو گا کہ یہ ڈاک خانے کے زریعے کام تلاش کرنے کی پر میسو دی سوجورنو کے لیے اپلائی کر سکے ۔ اس کام کے لیے غیر ملکی کو درخواست کے ساتھ روزگار کے دفتر کا فارم نتھی کرنا ہو گا ، جس سے یہ ثابت ہو کہ غیر ملکی بے روزگار ہے ۔ تھانے والے غیر ملکی کو کام تلاش کرنے کی 6 ماہ کی سوجورنو جاری کر دیں گے ۔ اگر اس وقفے کے دوران غیر ملکی کام تلاش کر لے تو اس کی کام تلاش کرنے کی سوجورنو کو کام کی سوجورنو میں تبدیل کر دیا جاتا ہے ، اس مقصد کے لیے غیر ملکی کو تھانے میں ڈاک خانے کے زریعے درخواست دینا ہوتی ہے اور فارم کیو روانہ کرنا ہوتا ہے ۔ کام کے مالک کے لیے ضروری ہوتا ہے کہ وہ غیر ملکی کے ساتھ کام کا کنٹریکٹ کرے ۔ اگر غیر ملکی کام تلاش کرنے والی پرمیسو دی سوجورنو کے ساتھ کام تلاش نہ کر سکے اور اس کا 6 ماہ کا عرصہ پورا ہو جائے تو اس صورت میں غیر ملکی کو اٹلی چھوڑنا ہوتا ہے اور اپنے ملک واپس جانا ہوتا ہے ۔ غیر قانونی طور پر کام سے نکالنے پر غیر یورپین اور یورپین امیگرنٹس کے وہی حقوق ہیں جو کہ اٹالین ملازمین کے ہوتے ہیں ۔

 

 

 

Joomla Templates and Joomla Extensions by ZooTemplate.Com

طلاق اور علیحدگی کی گائیڈ

جب میاں اور بیوی میں اختلافات پیدا ہوجائیں اور ان میں صلح وصفائی کا جزو بھی کام نہ کر سکے تو اس صورت میں اٹلی کے قانون کے مطابق اس شادی کو ختم کیا جا سکتا ہے ۔ میاں اور بیوی اس صورت میں اختلافات کیوجہ سے جج کے سامنے پہلے علیحدگی اور اسکے بعد طلاق کی درخواست دے سکتے ہیں ۔ اٹلی میں موجود قانونی طور پر رہائش پذیر غیر ملکی بھی طلاق اور علیحدگی کے قانون سے مستفید ہو سکتے ہیں ۔ طلاق اور علیحدگی کی صورت میں جج کی ذمہداری ہوتی ہے کہ وہ اس کا فیصلہ کرے اور کونسا قانون لاگو کرے ۔ جج یہ دیکھتا ہے کہ یہ شادی کس ملک میں ہوئی ہے اور شادی شدہ جوڑے نے کہاں زندگی بسر کی ہے ۔ اگر کوئی دوسرا ملک ان کی طلاق اور علیحدگی پر اپنا قانون لاگو نہیں کر سکتا تو اس صورت میں اٹالین قانون لاگو کیا جاتا ہے ۔ اٹلی میں دو قسم کی علیحدگی ہوتی ہے ۔

 

میاں بیوی کی مرضی کی علیحدگی یا separazione consensuale

اس علیحدگی کے مطابق میاں اور بیوی دونوں اپنی مرضی سے علیحدگی اختیار کرنے کا فیصلہ کرتے ہیں اور جائیداد کی تقسیم اور بچوں کے حقوق کے بارے میں بھی ایک باہمی فیصلہ کر لیتے ہیں ۔ اسکے بعد یہ دونوں ایک وکیل تلاش کرتے ہیں اور اپنی درخواست کے بارے میں لوازمات مکمل کرتے ہیں ۔ اگر میاں یا بیوی یہ چاہیں کہ وہ کوئی اپنی مرضی کا وکیل حاصل کریں تو اس صورت میں بھی وہ ایسا کر سکتے ہیں ۔ اسکے بعد وکیل انکی درخواست تیار کرے گا اور عدالت سے ایک تاریخ حاصل کرے گا ۔ عدالت میں جانے کے بعد جج انکی درخواست پر غور کرتے ہوئے انکی علیحدگی کو قبول کر لے گا اور ان کے حقوق و فرائض واضع کر دے گا ۔

 

عدالتی علیحدگی یا separazione giudiziale

یہ علیحدگی اس وقت ہوتی ہے ، جب میاں یا بیوی اس علیحدگی کے حق میں نہ ہو ۔ یعنی ان میں سے ایک بچوں کی سپردگی کے بارے میں کوئی اختلافی رائے رکھتا ہو ۔ جائیداد کی تقسیم کے بارے میں باہمی فیصلہ نہ ہو سکے یا پھر کوئی دوسرا جذباتی جزو بھیچ میں آجائے ۔ یعنی شادی کے بعد ازدواجی روابط قائم نہ ہو سکے ہوں یا ان میں سے ایک کسی دوسرے مرد یا عورت کے ساتھ چھپ کر یا کھلے عام محبت اور پیار کا رشتہ قائم کرلے ۔ اس صورت میں بھی کسی وکیل سے رابطہ کیا جا سکتا ہے اور ان میں سے ایک علیحدگی کے بارے میں درخواست دے سکتا ہے ۔ عدالتی علیحدگی کی صورت میں وقت زیادہ لگتا ہے اور اسکی قیمت بھی زیادہ ادا کرنی ہوتی ہے کیونکہ اختلافات کی صورت میں تمام فیصلے جج کو کرنے ہوتے ہیں اور ان کا فیصلہ کرنے کے لیے وقت درکار ہوتا ہے ۔ اس صورت میں وکیلوں کا کام بھی کافی مشکل ہوجاتا ہے ۔

 

جج انکی درخواست پر غور و فکر کرنے کے بعد ایک حتمی فیصلہ سنا دیتا ہے ۔ اٹالین قانون کے مطابق علیحدگی صرف اس صورت میں قانونی علیحدگی تصور کی جاتی ہے ، جب میاں اور بیوی عدالت میں علیحدہ ہونے کی صورت میں درخواست دیتے ہیں ۔ یعنی separazione di fattoیا آپس میں فیصلہ کرتے ہوئے علیحدگی کی کوئی قدر نہیں ہوتی ، اس لیے علیحدگی کی صورت میں عدالت میں جانا لازمی ہوتا ہے ۔ اگر ان میں سے کسی ایک نے  نے جج سے زندگی گزارنے کے چیک کے لیے درخواست دی ہے تو جج اسے اس چیک کی ادائیگی کا فیصلہ سنا دے گا ۔ عام طور پر یہ چیک اسے دیا جاتا ہے جو کہ معاشی طور پر کمزور تصور کیا جاتا ہے ۔ یعنی وہ شخص جو کہ اپنی زندگی چلانے کے لیے کوئی کام وغیرہ نہ کرتا ہو یا پھر بے روزگار ہوتا ہے  ۔ درخواست پر غور کرتے ہوئے جج اس چیک کی رقم کے بارے میں فیصلہ کرتا ہے اور عام طور پر یہ دیکھتا ہے کہ اس شخص کی زندگی ویسے ہی گزرے جیسے کہ شادی سے پہلے گزر رہی تھی ۔ اس کے بعد یہ بھی دیکھا جاتا ہے کہ ان میں سے ایک جب یہ چیک ادا کرتا ہے تو اس کی زندگی بھی معمول کے مطابق چلتی ہو اور اس کا کوئی روزگار موجود ہو ۔

زندگی گزارنے کے چیک میں وقت کے ساتھ ساتھ تبدیلی کی جاتی ہے ، یعنی اگر چیک دینے والے کا روزگار ختم ہوجائے یا پھر اس میں کمی آجائے یا پھر اضافہ ہو یا پھر کوئی دوسری قسم کے مسائل قائم ہو جائیں  تو اس صورت میں چیک کی رقم پر دوبارہ غور کیا جاتا ہے ۔ اگر میاں اور بیوی کی علیحدگی کی صورت میں بچے بھی موجود ہیں تو جج ان بچوں کے چیک کے بارے میں بھی فیصلہ کرے گا ۔ بچوں کو چیک اس وقت تک جاری کیا جاتا ہے جب تک کہ وہ خود روزگار کمانا شروع کر دیتے ہیں اور انکی عمر 18 سال کی ہوجاتی ہے ۔

 

طلاق

علیحدگی کے بعد میاں اور بیوی طلاق کے لیے درخواست دے سکتے ہیں ، بشرطیکہ وہ مندرجہ زیل دو لوازمات پورے کریں جو کہ بنیادی لوازمات ہیں ۔ اگر انکی علیحدگی دونوں کی مرضی سے ہوئی ہے تو اس صورت میں جج کی ایک مکمل رپورٹ ہونی لازمی ہوتی ہے ۔ اگر علیحدگی عدالتی طور پر ہوئی ہے تو اس صورت میں بھی جج کا حتمی فیصلہ موجود ہونا لازمی ہوتا ہے ۔ علیحدگی کی صورت میں 3 سال گزر جانے کے بعد طلاق کی درخواست دی جاتی ہے ۔ یہ وقت اس دن سے شروع ہوتا ہے جب میاں بیوی علیحدگی کی صورت میں پہلی بار جج کے سامنے پیش ہوتے ہیں ۔ عدالتی یا اپنی مرضی کی علیحدگی کی صورت میں طلاق کے 3 سال کا عرصہ لازمی قرار دیا گیا ہے ۔ اس صورت میں بھی دو قسم کی طلاق ہوتی ہے ۔  

 

اپنی مرضی کی طلاق یا divorzio consensuale

اگر دونوں میاں بیوی کی باہمی مرضی شامل ہو اور دونوں نے ملکر جج کو درخواست دے رکھی ہو اور ان میں کوئی جائیداد، بچوں اور کوئی دوسرا اختلاف موجود نہ ہو تو اس صورت میں جج طلاق کی درخواست قبول کر لیتا ہے ۔

 

عدالتی طلاق یا divorzio giudiziale

 یہ درخواست اس وقت دی جاتی ہے جب میاں اور بیوی میں سے ایک راضی نہ ہو ۔ یعنی ان میں سے ایک عدالت میں طلاق کی درخواست دیتا ہے ۔ صرف طلاق کی صورت میں شادی کے تمام تر بندھن ختم ہوتے ہیں ۔ خواہ وہ جائیداد کے ہوں یا پھر کسی دوسری قسم کے ہوں ۔ طلاق کے بعد دونوں کسی اور سے دوبارہ شادی کر سکتے ہیں ۔ طلاق کی صورت میں جج زندگی گزارنے کا چیک اس صورت میں دینے کا اعلان کرتا ہے جب ان میں سے کوئی ایک چند مجبوریوں کیوجہ سے کام نہ کر سکتا ہو ۔ یعنی معزور ہو ۔ یہ چیک اس صورت میں ختم کر دیا جاتا ہے ، جب چیک حاصل کرنے والا کسی دوسرے سے شادی کرلے ۔

 

 

 

Joomla Templates and Joomla Extensions by ZooTemplate.Com

سوک ڈیفنس یا شہری دفاع کی گائیڈ

اٹالین آئیں کے مطابق اس ملک کے تمام دفاتر پر لازم ہے کہ وہ ان دفاتر کے تمام تر کام ترتیب سے کریں ۔ ان دفاتر کے لیے ضروری ہے کہ یہ سروس مہیا کرنے کے لیے صاف ستھرے ، شفاف اور خوبصورت ہوں ، ان دفاتر میں کام کرنے والے ملازمین اورآفیسرز اپنی ڈیوٹی خوش اسلوبی سے نبھائیں اور کسی کو کوئی شکایت نہ ہو ۔ اصل میں جب ایک شہری کسی سرکاری دفتر میں جاتا ہے تو اس نے کوئی فارم حاصل کرنا ہوتا ہے ، کوئی سرٹیفیکٹ بنوانا ہوتا ہے یا پھرکسی سروس سے مستفید ہونا ہوتا ہے  لیکن جب یہ اس دفتر میں حاضر ہوتا ہے تو اسے کئی مشکلات پیش آتی ہیں ، اسکا کام کرنے کی بجائے اس کا کام بھگاڑ دیا جاتا ہے اور بعض اوقات اس سے برا سلوک بھی کیا جاتا ہے ۔ ان تمام مشکلات کے حل کے لیے اور اٹالین آئین کی حفاطت کے لیے سوک ڈیفنس کا شخص اپنا کردار ادا کرتا ہے ۔ سوک ڈیفنس کا شخص کون ہوتا ہے ؟ یہ کوئی وکیل نہیں ہوتا ، نہ ہی مجسٹریٹ ہوتا ہے ، نہ سیاست دان ہوتا ہے بلکہ ایک عام شہری ہوتا ہے جو کہ قوانین کا ایکسپرٹ ہوتا ہے اور ان دفاتر کے تمام ہتھکنڈوں سے بخوبی واقف ہوتا ہے جن کیوجہ سے کسی شہری کی زندگی اجیرن ہو جاتی ہے ۔ اٹالین میں اسے Difensore Civicoکہتے ہیں ۔ سوک ڈیفنس کا شخص اٹلی کے کمونے، صوبے اور ریجن کے دفاتر میں اپنا کردار ادا کرتا ہے اور اپنی قوت استعمال کرتے ہوئے وہ ان تمام غیر مساوی رویوں کو ختم کرنے کی کوشش کرتا ہے جو کہ دفتر اور شہری کے درمیان پیدا ہوتے ہیں ۔ پبلک ایڈمنسٹریشن کے تمام کاموں میں اگر کوئی بے ایمانی ہو، کوئی ملازم یا افسر اپنی زاتی طاقت استعمال کرتے ہوئے قانون کے خلاف جاتا ہو یا پھر کسی کو اسکی شناخت کیوجہ سے پریشان کیا جا رہا ہو تو سوک ڈیفنس کا فگر ترجمان کا کام کرتا ہے ۔ سوک ڈیفنس کا شخص جج نہیں ہوتا ، یعنی یہ کسی کو سزا نہیں دے سکتا یا پھر کسی کا چالان نہیں کر سکتا ۔ اس کا فرض ہوتا ہے کہ یہ دفاتر کے نظام کو بہتر بنوائے، قطاروں کیوجہ سے پریشانی دور کروائے اور وقت پر سروس دینے کے لیے اپنا کردار ادا کرے ۔ بعض اوقات چند دفاتر مہینوں بعد ایک فارم یا کام کرتے ہیں تو اس صورت میں سوک ڈیفنس کی مدد حاصل کی جا سکتی ہے ۔ اٹلی کے دفاتر یعنی ہسپتال، تھانہ، کمونہ، آزل یا کسی بھی دفتر میں ایک شہری سے زیادتی کی جا سکتی ہے ۔ سوک ڈیفنس کا شخص دانائی سے کام کرتے ہوئے کیس عدالت میں جانے سے پہلے ختم کرنے کی کوشش کرتا ہے ۔

 

سوک ڈیفنس کا شخص کسی بھی دفتر سے کسی شہری کے کیس ، کاغذات یا درخواست کے بارے میں فوری طور پر معلومات حاصل کر سکتا ہے ، اسے یہ طاقت فراہم کی گئی ہے کہ یہ کسی بھی دفتر میں جا کر کسی بھی کیس کی پڑتال کر سکے اور اس کیس کے حل نہ ہونے کی وجہ معلوم کر سکے ۔ اس کا حق ہوتا ہے کہ یہ کیس کی نوعیت کے بارے میں علم حاصل کر سکے ، تمام کاغذات کی جانچ و پڑتال کر سکے اور بغیر اخراجات کے ، ان کی فوٹو کاپی بھی کر سکے ۔ اس کا حق ہوتا ہے کہ یہ کسی بھی دفتر میں جا سکے ، خواہ اسے چند گواہوں نے اس دفتر کی کارکردگی کے متعلق معلومات فراہم کی گئی ہوں ۔

 

سوک ڈیفنس کی مدد کیسے حاصل کی جائے ؟ اگر ایک شہری سوک ڈیفنس کے شخص کی مدد حاصل کرنے کا خواہش مند ہے تو اسے اپنے کمونے، صوبے یا پھر ریجن کے دفتر میں جانا ہوگا اور یہ پوچھنا ہوگا کہ سوک ڈیفنس کا دفتر کہاں ہے ۔ اب شہری پر منحصر ہوتا ہے کہ وہ کس قسم کی سروس حاصل کرنے کے لیے سوک ڈیفنس کی مدد چاہتا ہے ۔ اگر اس شہری سے اس کے کمونے  میں زیادتی کی گئی ہے یا پھر اس کس کام میں تاخیر کی گئی ہے تواس صورت میں وہ کمونے کے سوک ڈیفنس سے رابطہ کرے گا ، یعنی اگر آپ کو گھر کا ٹیکس ICIآگیا ہے ، حالانکہ یہ ٹیکس ایک گھر ہونے کی صورت میں ختم کر دیا گیا ہے ۔ 

ان تمام کاموں کے لیے آپ سوک ڈیفنس سے ایک ملاقات کا وقت حاصل کریں گے ، آپ کو ایک فارم پر وجہ بیان کرنی ہوگی اور یہ لکھنا ہوگا کہ آپ کے ساتھ غیر انصافی ہوئی ہے اور متعلقہ دفتر نے آپ کے ساتھ انصاف نہیں کیا ۔ یا پھر آپ کو سوک ڈیفنس  کے دفتر کے ایڈریس پر ایک خط لکھنا ہوگا ۔ یا پھر سوک ڈیفنس کے دفتر میں فون کرنا ہوگا ، یا پھر اس دفتر میں فیکس روانہ کرنی ہوگی ۔ عام طور پر سوک ڈیفنس کی ایک انٹرنیٹ کی سائٹ بھی موجود ہوتی ہے ۔ آپ انکی سائٹ میں جا کر ایک فارم پر کرتے ہوئے ملاقات کیوجہ بیان کر سکتے ہیں اور اپنی ای میل دے سکتے ہیں ۔ آپ کے لیے ضروری ہے کہ آپ اپنا نام، فیملی نام ، ٹیلی فون اور پتہ اس ای میل کے زریعے روانہ کر دیں ۔ یاد رہے کہ سوک ڈیفنس کا شخص ہر شہری کی مدد مفت کرتا ہے لیکن وہ کسی بھی پرائیویٹ کیس کی پیروائی نہیں کرسکتا ۔ یعنی اگر آپ کی لڑائی یا مسئلہ ہمسایوں کے سلوک پر ہے یا پھر کوئی عدالتی کیس ہے تو اس صورت میں سوک ڈیفنس کا شخص آپ کی مدد نہیں کرے گا ۔ ایک دفع سوک ڈیفنس کا شخص جب آپ کے کیس کو قبول کر لے گا تو اسکے بعد وہ سرکاری دفتر میں جا کر اسکی چھان بین کرے گا ۔ اگر اس دفتر میں کوتاہی کی گئی ہے ، یا پھر غیر مساوی سلوک کیا گیا ہے یا پھر کسی نے زاتی طاقت استعمال کی ہے یا پھر بے ایمانی کی ہے تو اس صورت میں سوک ڈیفنس کا شخص اس دفتر کے ڈائریکٹر سے ملے گا اور اس کیس کو حل کرنے کے لیے کہے گا ، اگر اس دفتر کا ڈائریکٹر بھی اس کیس کے حل کے لیے انکار کردے تو اس صورت میں ڈائریکٹر کو لکھ کر وجہ بیان کرنی ہوگی اور اس میں یہ بھی لکھنا ہوگا کہ اس نے کام کرنے سے کیوں انکار کیا ہے ۔ اس لکھے ہوئے کاغذ کے ساتھ شہری عدالت میں کیس کرسکے گا ،اگر وہ حق پر ہے ۔ سوک ڈیفنس کا شخص ترجمان بننے کے علاوہ ان تمام خرابیوں کی پڑتال بھی کرسکتا ہے جو کہ سرکاری دفاتر میں موجود ہوتی ہیں ۔ وہ ان خرابیوں کو دور کرنے کے لیے اور دفاتر کے کام کو خوش اسلوب بنانے کے لیے مشورے دے سکتا ہے ۔ سرکاری دفاتر میں آئین کے مطابق کام کروانے کے لیے ضروری ہے کہ وہاں کی بلڈنگ ، ملازمین اور دوسرے تمام لوازمات پورے ہوں ۔ عام طور پر علاقے کی ایسوسی ایشنیں سوک ڈیفنس سے رابطہ کرتی ہیں اور دفاتر کی نوعیت کے بارے میں بتاتی ہیں ۔

Joomla Templates and Joomla Extensions by ZooTemplate.Com

اوور بکنگ کی گائیڈ

اوور بکنگ ایک ایسا لفظ ہے ، جس کے بارے میں وہ تمام لوگ واقف ہیں جو کہ جہاز کا سفر کرتے ہیں ۔ ہم آپ کو ایک گائیڈ کے زریعے اس مسئلے کے بارے میں بتاتے ہیں ۔ عام طور اس انگریزی کے لفظ کا استعمال کیا جاتا ہے لیکن اس لفظ سے ہوائی جہازوں کی کمپنیاں اور انکے ایجنٹ کافی فائدہ اٹھاتے ہیں ۔ ہوائی جہازوں کی کمپنیاں اوور بکنگ اس لیے کرتی ہیں تا کہ ان کے جہاز خالی نہ جائیں ۔ اوور بکنگ سے انہیں یہ فائدہ ہوتا ہے کہ اگر جہاز میں کوئی سیٹیں خالی رہ جائیں تو وہ اوور بکنگ کے زریعے ان کی کمی پورا کر لیتی ہیں ۔ ہوائی کمپنیاں بکنگ کے اصولوں میں چند ایسی باریک شکوں کو چھپا کر استعمال کرتی ہیں ، جن کے زریعے اوور بکنگ کا حربہ استعمال کیا جا سکے ۔ گاہک یا مسافر کو چاہئے کہ وہ ٹکٹ کی بکنگ کرواتے وقت ان کی شرا‏ئط پڑہ لے ۔ اوور بکنگ کی صورت میں مسافر سینکڑوں میلوں کا سفر کرتے ہوئے جب ائرپورٹ پر پہنچتا ہے تو اسے یہ خوبصورت پیغام سنایا جاتا ہے کہ جہاز میں جگہ نہیں ہے کیونکہ آپ کی اوور بکنگ ہے ۔ خاص طور پر جب بکنگ انٹرنیٹ یا آن لائن کے زریعے کی جاتی ہے تو اس صورت میں اوور بکنگ کا کھیل مزید کھیلا جاتا ہے ۔  یاد رہے کہ اوور بکنگ کے خلاف یورپین یونین نے ایک قانون بنا رکھا ہے جو کہ یورپ کے تمام ممالک رائج کر دیا گیا ہے ۔ اس کے علاوہ تمام ممالک میں سفر کے قوانین میں بھی اوور بکنگ کے بارے میں شکیں موجود ہیں ۔ اس قانون کو CE n. 261/2004کہتے ہیں ، جس پر عمل کرنا ضروری قرار دیا گیا ہے ۔ وہ لوگ جو کہ اوور بکنگ کا شکار ہوتے ہیں ، وہ اس قانون کے زریعے اپنا دفاع کر سکتے ہیں ۔ اس قانون میں اوور بکنگ کے علاوہ جہاز کا دیر سے آنا اور فلائٹ کا کینسل ہو جانا بھی شامل ہے ۔ یورپین یونین کا یہ قانون اس وقت رائج کیا جاتا ہے ، جب جہاز کی کمپنی یورپ کے کسی ممالک سے کام کر رہی ہو یا پھر کسی غیر یورپین یونین کے ملک سے تعلق رکھتی ہو لیکن یہ یورپ کو ٹچ کر رہی ہو ۔ یاد رہے کہ اس قانون میں چارٹر فلائٹس بھی شامل ہیں ۔ غیر یورپین یونین کے ملک سے تعلق رکھنے والی ہوائی کمپنی کے پاس یورپ سے کام کرنے کا لائسنس ہونا لازمی ہے ۔ اووربکنگ کا کیس کرنے کے لیے مسافر کے پاس ایک ویلڈ ٹکٹ ہونا لازمی ہے ، جس پر بکنگ کی گئی ہو ۔ مسافر پر لازمی ہے کہ وہ چیک ان کے اسٹینڈ پر حاضر ہو ، مسافر پر لازمی ہے کہ وہ اس وقت کا خیال رکھے جو کہ قانون کے مطابق اسے بتایا گیا تھا ۔ یعنی چیک ان پر وقت پر پہنچا جائے ۔ وہ مسافر جو کہ مفت سفر کرتے ہیں یا پھر ڈسکاؤنٹ ٹکٹ حاصل کرتے ہیں ، ان پر یورپین یونین کا قانون اپلائی نہیں ہو گا ۔ اگر اووربکنگ کیوجہ سے مسافر زمین پر رہ جاتا ہے تو اس صورت میں ائر کمپنی کا فرض ہوتا ہے کہ وہ مسافر کو کسی دوسرے موقع کے لیے راضی کرے ، یعنی کسی دوسری فلائٹ کے لیے کہے ۔ اس کے بعد مسافر کا حق ہوتا ہے کہ وہ ان کی اس آفر پر عمل کرے یا نہ کرے ۔ یعنی سفر کو ترک کرنے کا فیصلہ کرے یا جاری رکھنے کا ۔ اگر مسافر چاہے تو وہ ٹکٹ کے پیسے واپس لینے کے لیے کہہ سکتا ہے اگر وہ یہ محسوس کرتا ہے کہ وہ اس کا سفر اب رائیگاں جائے گا ۔ اس کے علاوہ مسافر اس خرچے کے بارے میں بھی پوچھ سکتا ہے جو کہ اس نے ائرپورٹ پر پہنچنے کے لیے کیا ہے ۔ اگر مسافر چاہے تو وہ اگلی فلائٹ کے لیے بھی راضی ہو سکتا ہے ۔ مسافر کا حق ہوتا ہے کہ اگلی فلائٹ حاصل کرنے کے علاوہ اپنے نقصان کی رقم ہوائی کمپنی سے مانگ سکے ۔ 1500 کلومیٹر سے کم فاصلے کے سفر کے لیے مسافر نقصان کی رقم 250 یورو تک حاصل کرنے کا حقدار ہے ۔ 1500 کلومیٹر سے زیادہ فاصلے کے سفر کے لیے مسافر نقصان کی رقم 400 یورو تک حاصل کرنے کا حقدار ہے جو کہ یورپ کے ممالک میں شامل ہوں ۔ اسی رقم میں وہ فاصلے بھی شامل ہیں جو کہ 3500 کلومیٹر سے کم ہوں اور کسی بھی ملک میں جاتے ہوں ۔ باقی تمام تر فاصلوں اور ممالک کے لیے مسافر 600 یورو کے نقصان کا دعوہ کر سکتا ہے ۔ اگر مسافر نے اووربکنگ کی صورت میں کسی اگلے جہاز کے لیے آفر قبول کر لی ہے تو اس صورت میں مسافر کو نقصان کی رقم 50 فیصد دی جائے گی ۔ اس صورت میں بھی یہ دیکھا جائے گا ، اگر مسافر پہلی صورت میں یعنی 1500 کلومیٹر کے سفر کے دوران 2 گھنٹے دیر سے منزل مقصود پر پہنچا ہے ۔ 1500 کلومیٹر سے زیادہ  سفر کے دوران 3 گھنٹے دیر سے منزل مقصود پر پہنچا ہے اور باقی تمام منزل مقصود کے لیے 4 گھنٹے دیر سے پہنچا ہے ۔ یہ وقت اس وقت سے حاصل کیا جاتا ہے جو کہ پہلی فلائٹ کی بکنگ پر درج تھا ۔ اس کے علاوہ ائر کمپنی کا حق ہوتا ہے کہ اووربکنگ کی صورت میں اگر مسافر زمین پر رہ جائے تو وہ اسے تمام وہ آزائشیں مہیا کریں جو کہ اس نے انتظار کے دوران صرف کرنی ہیں ۔ مثال کے طور پر کھانا اور پینا، جو کہ اس نے انتظار کے تمام تر عرصے کے لیے استعمال کرنا ہے ۔ ہوٹل کی بکنگ ایک یا ایک سے زیادہ دنوں کے لیے ۔ ٹیلی فون کرنے کی سہولت اور فیکس یا انٹرنیٹ کی سہولت ، جس سے مسافر نے اپنے سفر کے بارے میں دوسروں کو آگاہ کرنا ہے ۔ اووربکنگ کی صورت میں زمین پر رہنے والے مسافروں کے لیے ائر کمپنی پر لازمی ہوتا ہے کہ وہ انہیں ایک فارم مہیا کرے ، جس پر مسافروں کے حقوق کے بارے میں لکھا ہوتا ہے ۔ اووربکنگ کی صورت میں ائر کمپنی کا فرض ہوتا ہے کہ وہ ٹریول ایجنسیوں کو اور اپنے چیک ان کے اسٹینڈ پر ان تمام اصولوں کو مہیا کریں جو کہ مسافروں کے لیے ایک گائیڈ کا کام دے سکتے ہیں ۔ فلائٹ کینسل ہونے کی صورت میں اور دیر سے آنے کی صورت میں بھی یہی طریقہ کار اپنایا جاتا ہے ۔ پہلی صورت میں رقم کی واپسی مسافر کو ملنا لازمی ہوتی ہے لیکن اگر مسافر کو ایک ہفتہ قبل فلائٹ کے منسوخ ہونے کا بتایا جائے تو اس صورت میں بات مختلف ہو گی ۔ اگر مسافر کو ایک ہفتے سے کم دنوں میں بتایا گیا ہے اور اس کے بعد اسے کسی دوسری فلائٹ کی آفر کی گئی ہے تو اس صورت میں بھی نقصان کی رقم ادا نہیں کی جائے گی ۔ اگر کسی قدرتی آفت سے فلائٹ کینسل ہوئی ہے تو اس صورت میں بھی نقصان کی رقم ادا نہیں کی جائے گی ۔ جہاز کے دیر سے آنے کی صورت میں ہوائی کمپنی کا حق ہوتا ہے کہ وہ مسافر کی ہر قسم کی مدد کرے یا اسے اسسٹنس دے ۔ اگر جہاز 5 گھنٹے سے زیادہ وقت کے لیے دیر سے آئے اور مسافر کے لیے یہ سفر ضروری نہ رہے تو مسافر ٹکٹ کی رقم کی واپسی کے لیے کہہ سکتا ہے ۔ یاد رہے کہ اپنا نقصان پورا کرنے کے لیے ہمیشہ عدالت یا سرکاری اداروں سے رابطہ کیا جا سکتا ہے لیکن اگر جہاز کی کمپنی مسافر سے تعاون کرے اور اسے دوسری کوئی آفر دے دے تو اس صورت میں مسئلہ حل کیا جا سکتا ہے ۔ فلائٹ کے دیر سے آنے کی صورت میں ، کینسل ہونے کی صورت میں اور اووربکنگ ہونے کی صورت میں ہوائی کمپنی کو ایک خط روانہ کیا جا سکتا ہے اور اس خط کے زریعے اپنے نقصان کی رقم کی واپسی کا دعوہ کیا جا سکتا ہے ۔ اگر یہ جواب نہ دیں تو کسی وکیل سے یا گاہکوں کی مدد کی ایسوسی ایشن سے رابطہ کیا جا سکتا ہے ۔ اس کے بعد یاد رہے کہ 516 یورو کی رقم تک آپ وکیل کے بغیر بھی امن کے جج کے پاس جا سکتے ہیں اور کیس کرسکتے ہیں ۔ زیادہ رقم کے لیے مسافر کو کسی وکیل کی ضرورت ہوگی ۔

Joomla Templates and Joomla Extensions by ZooTemplate.Com

ایسوسی ایشن بنانے کا طریقہ کار

 

جب آپ ایک ثقافتی ایسوسی ایشن بنانے کا فیصلہ کرتے ہیں تو سب سے پہلے ضروری ہوتا ہے کہ آپ ایسے گروپ کو تشکیل دیں جو کہ ایسوسی ایشن کے نظریے پر یقین رکھتے ہیں ۔ اس کے بعد ایسوسی ایشن کا ایک آئین بنایا جاتا ہے اور اس کا منشور تیار کیا جاتا ہے ۔ اسکے بعد ایسوسی ایشن کے ممبران آئین اور منشور پر بحث و مباحثہ کرتے ہیں اور اسے حتمی شکل دی جاتی ہے ۔ ایسوسی ایشن کا منشور یا statutoاس قسم سے بنایا جاتا ہے ، جس میں جمہوری قدروں کا خیال رکھنا ضروری ہوتا ہے ۔ یعنی سب ممبران برابر کے حقوق رکھتے ہیں ، کوئی کسی بالاتر نہیں اور سب الیکشن کے زریعے منتخب کیے جاسکتے ہیں ۔ منشور کے اندر تمام حقوق اور عہدوں کا زکر کیا جاتا ہے ۔ ایسوسی ایشن بنانے کے لیے مندرجہ زیل کوائف درج کیے جاتے ہیں ۔1۔ ایسوسی ایشن کا مقصد کیا ہے ۔ 2۔ وہ تمام کوائف جو کہ ایسوسی ایشن بنانے کے لیے ضروری ہوتے ہیں ۔ 3۔ ایسوسی ایشن کے ممبران کا زکر انکی تقرری کی مدت اور انکے فرائض۔ ایسوسی ایشن کو اپنے متعلقہ صوبے کے دفتر میں رجسٹرڈ کروایا جاتا ہے ۔ اگر ممبران کے ساتھ کنٹریکٹ کیے جاتے ہیں ، یا پھر سرکاری دفاتر سے فنڈ حاصل کیے جاتے ہیں۔ یاد رہے کہ فنڈ اور کنٹریکٹ ایسوسی ایشن اس وقت کرتی ہے ، جب اسکو بنائے ہوئے 2 سال کا عرصہ گزر چکا ہو ۔ ایسوسی ایشن کو بنانے کا ایکٹ اور اس کا منشور ایک نوٹری پبلک یا notaioکے سامنے پیش کیا جاتا ہے جو کہ اسے رجسٹر کرتا ہے ۔ اس عمل کے لیے ایسوسی ایشن کے بنیادی ممبران کا ہونا ضروری ہوتا ہے ۔ اس پر 300 یورو کا خرچہ آتا ہے ۔ ایسوسی ایشن ایک شخص کی طرح نہیں ہوتی ، اس لیے اس کے نام پر جائیداد نہیں بنائی جا سکتی ۔ ایسوسی ایشن کا ایک ڈھانچہ بنایا جاتا ہے جس میں مندرجہ زیل کوائف پورے کرنا لازمی ہوتے ہیں ۔ 1۔ ایسوسی ایشن کے ممبران کی سال میں ایک میٹنگ لازمی ہوتی ہے ، جس میں بالائی کونسل کا انتخاب ہوتا ہے ، خزانچی موجود ہوتے ہیں اور اگلے سال کے بجٹ کے لیے بحث کی جاتی ہے اور اسکی منظوری کے لیے  بل پاس کیا جاتا ہے ۔ اس میٹنگ میں بنیادی ممبران کا ہونا ضروری ہوتا ہے ۔ 2۔ ایسوسی ایشن کی consiglio Direttivoیا پھر بنیادی ممبران کی کونسل کے پاس عام اور خاص اختیارات ہوتے ہیں ۔ بنیادی کونسل میں ایسوسی ایشن کا صدر، نائب صدر اور ایک اور ممبر ہونا لازمی ہوتا ہے ۔ بنیادی کونسل میں ممبران کی تعداد طاق اعداد میں ہونا لازمی ہوتی ہے ۔ یعنی تین ، پانچ یا سات وغیرہ ۔ ایسوسی ایشن کے صدر کے پاس تمام اختیارات موجود ہوتے ہیں جو کہ ایسوسی ایشن کے لیے فیصلہ کن ہوتے ہیں ۔ 3۔ بنیادی کونسل ایسوسی ایشن کے خزانچیوں کا انتخاب کرتی ہے ، جسے Collegio dei Revisori dei Contiکہتے ہیں ۔ ایسوسی ایشن کے خزانچی یا کالج اسکی فنانس اور معاش کا خیال رکھتے ہیں ۔ خزانچیوں کے لیے ضروری ہوتا ہے کہ وہ ایسوسی ایشن کی رقم کو سوشل کاموں کے لیے خرچ کریں اور ایسوسی ایشن کے منشور پر عمل کریں ۔ 4۔ ایسوسی ایشن کا صدر اسکا لیگل ممبر ہوتا ہے اور یہ تمام قانونی کاروائیوں کا جواب دہ ہوتا ہے ۔ صدر کا انتخاب بنیادی کونسل یا عام ممبران کی کونسل کے زریعے کیا جاتا ہے ۔ صدر کا عہدہ باقی تمام عہدوں کی طرح معینہ مدت پر مبنی ہوتا ہے ۔ ایسوسی ایشن کے تمام سوشل کام ایک رجسٹر میں درج کیے جاتے ہیں ۔ ضروری نہیں کہ ان کاموں کو کہیں شو کیا جائے لیکن ان کا اندراج کاغذات میں ہونا ضروری ہوتا ہے ۔ ایسوسی ایشن کی کاروا‏ئیاں ممبران کے علاوہ دوسرے عام اشخاص کے لیے بھی جاری کی جاتی ہیں ۔ تمام تر کاروائیاں یا خدمات کسی نفع کے بغیر کی جاتی ہیں اور اس سے کمائی نہیں کی جا سکتی ۔ وہ تمام کمرشل کام ، جس میں بچت کی جاتی ہے ، ان تمام کاروائیوں کے لیے ٹیکس نمبر یا پارتیتا ایوا کھولا جاتا ہے اور اس میں تمام تر بچت اور اخراجات اور ٹیکسوں کا رجسٹر بنایا جاتا ہے لیکن ایسوسی ایشن کی اس بچت کو عام کاروبار سے تشبیع نہیں دی جا سکتی ۔ ایسوسی ایشن کی بچت کو اسکی نشو نما کے لیے خرچ کر دیا جاتا ہے ۔ اگر آپ چاہتے ہیں کہ ایسوسی ایشن ایک سرکل یا Circoloکا روپ اختیار کرے اور آپ اپنے ممبران کو سروس مہیا کریں ۔ مثال کے طور پر بیوریج، شراب، فوڈ یا دوسری قسم کی فروخت تو اسکے لیے آپ کو وزارت داخلہ سے اجازت حاصل کرنی ہوگی ۔ وزارت داخلہ قوم کو فارغ وقت کے لیے ایک اجازت نامہ جاری کرتی ہے ۔ اس مقصد کے لیے ایسوسی ایشن کو اٹلی کی بڑی ایسوسی ایشنیں ARCI; ACLIکا وغیرہ کا ممبر بننا ہوتا ہے ۔ یاد رہے کہ ایک عام ایسوسی ایشن بنانے کے لیے نوٹری پبلک کی ضروری نہیں ہوتا ۔ صوبے کے ایسوسی ایشن کے دفتر میں جا کر بتانا ہوتا ہے کہ آپ ایسوسی ایشن کیوں بنانا چاہتے ہیں ۔ ایسوسی ایشن کونسے کام کرے گی اور اسکے مقاصد کیا ہیں ۔ اس کی کیا کونسی ملکیت ہے ، اس کا دفتر کہاں ہے ۔ ایسوسی ایشن کے مقاصد میں عہدوں اور انکے حقوق و فرائض کا زکر ہونا لازمی ہوتا ہے ۔ ایسوسی ایشن بنانے سے قبل ضروری ہے کہ آپ اٹلی سول کوڈ کی کتاب کا 14 واں اور 35 واں آرٹیکل ضرور پڑہ لیں ۔ ایسوسی ایشن بغیر کسی خرچے کے بنائی جا سکتی ہے ۔ اٹلی کے قانون کے مطابق ایسوسی ایشنیں اور کلچرل سرکل اسٹیٹ کی جانب سے منظور شدہ اور نا منظور شدہ دونوں کام کر سکتے ہیں ۔ ایسوسی ایشن کے لیے جب اپلائی کیا جاتا ہے تو اسی درخواست  صوبے سے متعلقہ پریفی تورا میں اور اسکے بعد متعلقہ وزارت اور اسکے بعد اٹلی کے صدر کے دفتر سے منظور ہوتی ہے ۔ اگر تمام کام وقت کے مطابق ہو جائے تو 2 سالوں کے اندر ایسوسی ایشن کو منظور کر لیا جاتا ہے ۔ ایسوسی ایشن کو جلد منظور کروانے کے لیے ضروری ہوتا ہے کہ یہ اپنے منشور میں یہ ظاہر کردے کہ یہ صوبائی اور ریجنل لیول پر کام کرے گی ۔ اس صورت میں ریجن کا صدر ایسوسی ایشن  کی منظوری جاری کر دیتا ہے ۔ منظور شدی کے لیے  ایسوسی ایشن کا منشور اور آئین ایک نوٹری پبلک سے لکھا ہونا ضروری ہوتا ہے ۔ ایسوسی ایشن کا سالانہ بجٹ جاری کرنا لازمی ہوتا ہے ۔ اگر ایسوسی ایشن کسی قومی ایسوسی ایشنوں کی تنظیم یعنی آکلی اور آرچی سے ممبر شپ کرے تو اس صورت میں ایسوسی ایشن کم ٹیکس ادا کرتی ہے ۔ اس قانون کو 94۔153 آرٹیکل 14 کہتے ہیں ۔

Joomla Templates and Joomla Extensions by ZooTemplate.Com